بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / وزیراعظم کا آرٹیکل 62 میں ترمیم کا عندیہ

وزیراعظم کا آرٹیکل 62 میں ترمیم کا عندیہ

اسلام آباد: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے آئین کے آرٹیکل 62 ون ایف میں ترمیم کا بل لانے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا کہ آرٹیکل باسٹھ ون ایف میں ترمیم کے لیے اپوزیشن سے مل کر بل لایا جاسکتا ہے۔

 ان کا کہنا تھا کہ وہ 45 دن رہیں گے یا زیادہ، اس بات کا فیصلہ ان کی پارٹی پاکستان مسلم لیگ نواز کرے گی۔انہوں نے کہا کہ وزارت عظمیٰ کیلیے میرا نام سابق وزیراعظم نواز شریف نے تجویز کیا تھا جس کی سب نے تائید کی۔

انٹرویو کے دوران انہوں نے آرٹیکل 62 ون ایف میں ترمیم کا بل لانے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا کہ آرٹیکل باسٹھ  ون ایف میں ترمیم  کے لیے اپوزیشن سے مل کر بل لاسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اس آرٹیکل کا تعلق صادق اور امین ہونے سے ہے، سابق وزیراعظم نوازشریف کو سپریم کورٹ نے آئین کے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت ہی نااہل قرار دیا ہے، آرٹیکل 62 ون ایف کی تشریح پر ابہام ہے۔

چوہدری نثار کے کابینہ میں شامل نہ ہونے کے سوال پر ان کا کہنا تھا کہ ان کے اور سابق وزیر وفاقی داخلہ کے بہترین تعلقات ہیں اور انہیں کابینہ کا حصہ ہی سمجھا جائے۔

وزیراعظم نے کہا کہ جب ان کا نام وزارت عظمیٰ کے لیے منظور کیا گیا تو چوہدری نثار نے بھی اس کی تائید کی تھی۔

انہوں نے کہا کہ پیٹرولیم اور پاور کی وزارت کو ضم کردیا ہے، پانی کی وزارت کی اشد ضرورت تھی جو ہم نے بنا دی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ امریکا سے تعلقات بہتر ہیں اور مزید بہتر کرنےکی ضرورت ہے جبکہ روس سے بہت عرصے کے بعد تعلقات میں بہتری آئی ہے۔