بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / پشاور ٗ طالبہ کی داعش میں شمولیت کی خبر جھوٹ نکلی

پشاور ٗ طالبہ کی داعش میں شمولیت کی خبر جھوٹ نکلی


پشاور۔پشاور پولیس نے پشتخرہ سے لاپتہ ہونے والی نجی میڈیکل کالج کی طالبہ کو کراچی سے بازیاب کرلیا ہے، طالبہ سے متعلق سوشل میڈیا پر خبریں گردش کر رہی تھیں کہ وہ بین الاقوامی شدت پسند تنظیم ’’داعش‘‘ میں شامل ہوئی ہے تاہم اصل میں وہ گھر سے ناراض ہوکر اچی گئی تھی اورداعش میں شمولیت کے پیغام پر مبنی ایک جھوٹا خط گھر میں چھوڑ دیا تھا پولیس نے مزید تفتیش شروع کردی ہے ۔پولیس کے مطابق 9ستمبر 2017 کو تھانہ پشتہ خرہ میں طالبہ کے والدنے رپورٹ درج کرائی تھی کہ اس کی24 سالہ بیٹی ایک نجی میڈیکل کالج کی طالبہ ہے اور ہاسٹل میں رہتی تھی جو8 ستمبر سے لاپتہ ہے بعدازاں سوشل میڈیا پر خبریں چلیں کہ طالبہ نے بین الاقوامی شدت پسند تنظیم داعش میں شمولیت اختیار کرلی ہے۔

جس کا نوٹس لیتے ہوئے ایس ایس پی آپریشنز سجاد خان کی ہدایت پر اے ایس پی حیات آباد پر مشتمل خصوصی ٹیم نے سائنسی خطوط پر تفتیش کی تو انکشاف ہوا کہ طالبہ گھر سے ناراض ہوکر کراچی میں مقیم ہے جس پر پولیس نے فوری کاروائی کرکے گزشتہ روز اسے کراچی سے بازیاب کرلیا ابتدائی تفتیش میں یہ انکشاف بھی ہوا کہ لڑکی نے ایک جھوٹے خط کے ذریعے خود کوداعش میں شامل کرنے کا دعویٰ کیا تھا،پولیس کے مطابق طالبہ خیبر میل ریل گاڑی کے ذریعے کراچی گئی تھی اوروہ ڈپریشن کی مریضہ ہے والدہ کی مار پیٹ اور طعنوں سے تنگ آکر کر یہ قدم اٹھایا مزید بتایا گیا ہے کہ اس کا 12 ستمبر سے امتحان شروع ہونیوالا تھا لیکن اس کی تیاری نا مکمل تھی۔

تفتیش کے دوران یہ بات بھی سامنے آئی ہے اس کی والدہ آزاد خیالات رکھنے پر اسے مارتی پیٹتی تھی پلان کے مطابق اس نے بینک اے ٹی ایم کے ذریعے رقم نکلوائی، اپنے تمام موبائل فونز دوست کے حوالے کئے اور اس کا موبائل فون لے کر کراچی گئی جہاں ایک نجی فرم میں ملازمت حاصل کرکے کرائے کے مکان میں رہائش اختیار کررکھی تھی پولیس ٹیم نے طالبہ کے کلاس فیلوز ٗ اساتذہ اور والدین کے بیانات کی روشنی میں تفتیش کی تو معلوم ہوا اس کا مذہبی انتہا پسندی سے کوئی تعلق نہیں تھا بلکہ آزاد خیال ہونے او ر والدہ سے تنگ آکر گھر سے بھاگنے کامنصوبہ بنایا ۔