بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / بھارت کو اسی کی زبان میں جواب دینگے ٗ احسن اقبال

بھارت کو اسی کی زبان میں جواب دینگے ٗ احسن اقبال

اسلام آباد۔ وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال نے کہا ہے کہ ورکنگ باؤنڈری کی رہائشی آبادیوں کو نشانہ بنا کر رعب جمانا بھارت کی بھول ہے،وہ جس زبان میں بات کرے گا اسی زبان میں جواب دینا جانتے ہیں، مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کے خلاف آواز اٹھانا پاکستان کا فرض ہے،جب بھی مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اجاگر کیا جاتا ہے تو بھارت بزدلانہ کارروائیاں کرکے عالمی برادری کی توجہ ہٹانے کی کوشش کرتا ہے اور نہتے لوگوں کو نشانہ بنایا جاتا ہے۔

وزارت داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال نے ورکنگ باؤنڈری کے چارواہ سیکٹر میں بھارتی فوج کی جانب سے ہونے والی فائرنگ سے زخمی ہونے والے شہریوں کی سی ایم ایچ سیالکوٹ میں عیادت کی اور ان کی جلد صحت یابی کے لئے دعا بھی کی۔اس موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال کا کہنا تھا کہ جب بھی مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اجاگر کیا جاتا ہے تو بھارت بزدلانہ کارروائیاں کرکے عالمی برادری کی توجہ ہٹانے کی کوشش کرتا ہے اور نہتے لوگوں کو نشانہ بنایا جاتا ہے لیکن بھارت یہ جان لے کہ کسی بھی ظلم کے ذریعے کشمیریوں کی آواز کو دبایا نہیں جاسکتا۔

پاکستان مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے بھارتی مظالم کے خلاف آواز فرض سمجھ کر اٹھاتا رہے گا۔احسن اقبال نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر یا ورکنگ باؤنڈری پر نہتے شہریوں پر رعب جمانا بھارت کی بھول ہے بھارت جس زبان میں بات کرے گا ہم اسی زبان میں جواب دینا جانتے ہیں۔احسن اقبال نے کہا کہ فائرنگ سے اموات پر افسوس ہے، یہ پورے پاکستان کے شہید ہیں، حکومت متاثرین کا تمام نقصان پورا کرنے کے لئے جائزہ لے رہی ہے اورحکومت متاثرین کی مالی مدد اورزخمیوں کو علاج معالجے کی سہولت فراہم کرے گی۔

وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال کے دورہ کے دوران ان کے ہمراہ وزیر قانون زاہد حامد بھی تھے ۔زاہد حامد نے بھی سیالکوٹ میں ورکنگ باؤنڈری پر بھارتی فوج کی فائرنگ سے زخمی ہونے والے شہریوں کی عیادت کی اور ان کی جلد صحت یابی کی بھی دعا کی۔واضح رہیکہ بھارتی فورسز نے گزشتہ روز ورکنگ باؤنڈری پر بلا اشتعال فائرنگ اور گولہ باری کی تھی جس کے نتیجے میں 6 عام شہری شہید اور 26 زخمی ہوگئے تھے جب کہ پاکستان نے حملے پر بھارتی ہائی کمشنر کو طلب کیا تھا اور ڈی جی ایم او نے اپنے بھارتی ہم منصب سے ہاٹ لائن پر بھی رابطہ کیا