بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / پانی کو محفوظ بنانے کیلئے 4منصوبوں پر کام کا آغاز

پانی کو محفوظ بنانے کیلئے 4منصوبوں پر کام کا آغاز

اسلام آباد۔ڈپٹی چیئرمین پلاننگ کمیشن سرتاج عزیزنے کہا ہے کہ قدرت نے پاکستان کو پانی کے ذخائر سے نوازا ہے، پلاننگ کمیشن آف پاکستان کا ایک اہم مقصد یہ ہے کہ ان قدرتی وسائل کو ملک میں پانی کی کمی کو دور کرنے اور بجلی پیداکرنے کیلئے محفوظ رکھا جائے، پانی کے ذخائر کو محفوظ کرکے زرعی ترقی میں اہم کردار ادا کیا جا سکتا ہے، ملک کی مستقبل کی ترقی کا دارومدار پاکستان کے آبی ذخائر میں توسیع اور مناسب استعمال پر ہے جس کیلئے وفاقی حکومت اپنا کردار ادا کر رہی ہے۔

آبادی میں اضافے نے پوری دنیا کی زمین اور پانی کے ذخائر پربوجھ ڈالاہے، اس لئے لازمی ہے کہ آبی ذخائرکومحفوظ رکھاجائے۔ڈپٹی چیئرمین کمیشن سرتاج عزیز جمعرات کو یہاں سی ڈی ڈبلیوپی کے اجلاس سے خطاب کررہے تھے جو پلاننگ کمیشن میں منعقد ہوا۔ اجلاس میں پانی کے چارمنصوبوں کی منظوری دی گئی جس میں دو پوزیشن پیپرز بھی شامل ہیں۔ ان منصوبوں میں اباتو، ڈائیسرااورسانزالا ڈیم قلعہ عبداللہ بھی شامل ہیں۔

منصوبے کا مقصد تین مختلف جگہوں پر چمن ٹان سے جنوب مشرق کی طرف چیک ڈیم کی تعمیر ہے جوسیلابی پانی کو جمع کرے گا اور زیرزمین پانی کی کمی کو پورا کرے گا، یہ منصوبہ 18ماہ میں تین سوملین روپے کی لاگت سے مکمل کیاجائے گا۔اس منصوبے کا مقصد بارش کے سیلابی پانی کو جمع اور محفوظ کرکے زمین کے پانی کے ذخائر کو پوراکرناہے تاکہ موجودہ بارانی پانی آبپاشی کیلئے مددگار ثابت ہوسکے،مقامی لوگوں کیلئے تفریح اورروزگارکے مواقع فراہم کرسکے۔

اس کے علاوہ سی ڈی ڈبلیوپی نے ایک پوزیشن پیپرکی منظوری دی ہے اور ایکنک کوسفارش کی ہے جس میں پاکستان گلیشئرمانیٹرنگ نیٹ ورک اور کمانڈایریا ڈیویلپمنٹ کرم تنگی ڈیم جوکہ بالترتیب 892 ملین اور5091ملین روپے کی لاگت سے بنایاجائے گا۔منصوبے کا متوقع نتیجہ یہ ہے کہ اس سے ایک ایساآبپاشی کانظام بنایاجائے گا جس سے پانی کا باکفایت استعمال، فصلوں کی بہترپیدوار کاحصول، پراسسنگ کے نظام کو بہتربنانے، دریاکے بہا کو مانیٹرکرنے اوردریائے سندھ کے بالائی علاقوں سے موسمی حالات کوکنٹرول کیا جا سکتا ہے۔