بریکنگ نیوز
Home / اداریہ / بھارت کو سمجھ آ گئی

بھارت کو سمجھ آ گئی


پاک فوج نے لائن آف کنٹرول پر اپنی حدود میں داخل ہونے والے بھارتی ڈرون کو مار گرایا میڈیا رپورٹس کے مطابق فوجی جوانوں نے تباہ شدہ طیارے کا ملبہ قبضے میں لے لیا ہے ۔ بھارتی جاسوس طیارہ دکھ چکری سیکٹر میں60 کلو میٹر پاکستانی حدود میں گھس آیا تھا دریں اثنا بھارتی فوج کی بلااشتعال فائرنگ کے نتیجے میں4 بچے شہید ہو گئے ہیں جبکہ3 شہری زخمی ہیں پاک فوج کی موثر جوابی کاروائی کے نتیجے میں دشمن کی چوکیوں پر موت کا سناٹا چھا گیا ہے ۔ اس سے پہلے بھارتی آبدوز کے پاکستانی پانیوں میں داخلے کی کوشش کو بری طرح ناکام بنایا جا چکا ہے ۔ بھارت کنٹرول لائن پر فائرنگ کے موثر جواب میں اپنے فوجیوں کی ہلاکت کی تصدیق بھی کر چکا ہے آ رمی چیف جنرل راحیل شریف کا کہنا ہے کہ پاک فوج روایتی جنگ کیلئے تیار ہے پاکستان آرمی سپہ گری اور بہادری کے ورثے کی امین ہے اور اس نے ہر چیلنج کا کامیابی سے مقابلہ کیا ہے دفترخارجہ کی جانب سے ایل او سی پر بھارتی فوج کی بلا اشتعال فائرنگ کی مذمت کی گئی ہے فارن آفس کے ترجمان کا کہنا ہے کہ بھارت سیز فائرمعاہدے کی مسلسل خلاف ورزی کررہا ہے بھارت کو سرجیکل سٹرائیک کے ڈرامے کے فلاپ ہونے کے ساتھ ایل او سی پر جارحیت کا منہ توڑ جواب مل چکا ہے ۔

سمندر میں آبدوز کی دراندازی بری طرح ناکام ہونے کے فوراً بعد ڈرون کا ماراگرایا جانا ایک ایسا سبق ہے کہ جس میں بھارت کو بات سمجھ آہی گئی ہو گی کہ امن کی خواہش پاکستان کی کمزوری نہیں اور یہ کہ پاک فوج ہر جارحیت کا موثر جواب دینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے ۔ یہی بات دیگر ممالک کو بھی بھارت کو سمجھانی چاہئے کہ وہ پاکستان کے خلاف جارحیت کے نتائج کا ادراک کرے ۔

یونیورسٹیز ایکٹ میں ترمیم

خیبر پختونخوا حکومت نے جامعات کے انتظام سے متعلق قاعدے قانون میں ترمیم کا عندیہ دیا ہے یونیورسٹیز ایکٹ کو مزید بہتر بنانے کیلئے وائس چانسلروں کو اپنی تجاویز ارسال کرنے کی ہدایت بھی کر دی گئی ہے دستور میں ترمیم کے بعد سرکاری جامعات کا کنٹرول صوبوں کے پاس آ چکا ہے صوبائی سطح پر اس انتظام کو چلانے کے لئے ایکٹ تیار کیا گیا جس پر یونیورسٹی اساتذہ نے اپنے تحفظات پیش کئے ہیلتھ کے شعبے میں قانون بناتے ہوئے ڈاکٹروں اور دوسرے طبی عملے کی شکایات سامنے آئیں۔

اور احتجاج نے سروسز کی فراہمی کو بری طرح متاثر کیا یونیورسٹی اساتذہ کی ہڑتال نے تعلیمی عمل کو معطل رکھاکسی بھی شعبے میں حکومتی اصلاحات کامقصد یقیناًعوام کو ریلیف اور جدید دور کے تقاضوں کو پورا کرنا ہی ہوتا ہے تاہم اصلاحات کے اس عمل میں مشاورت کا دائرہ سٹیک ہولڈرز تک وسیع رکھا جائے تو کسی بھی قانون کے نفاذ پر احتجاج سامنے نہیں آئے گا تاہم اس سارے عمل میں واضع رکھا جائے کہ بہتری کے لئے اقدامات پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو گا اور محض چند افراد کی خاطر ریفارمز کے پورے عمل کو کسی بھی صورت متاثر نہیں ہونے دیا جائے گا ہمارے اداروں میں اصلاح احوال کے لئے ایک بڑی گنجائش موجود ہے جس کا ادراک کرنا ہوگا۔