بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / سندھ طاس معاہدہ توڑنا عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے، سرتاج عزیز

سندھ طاس معاہدہ توڑنا عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے، سرتاج عزیز


اسلام آباد۔مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا کہ سندھ طاس معاہدہ توڑنا عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے بھارت پاکستان دباؤ میں لانا چاہتا ہے ان کی کوشش ہے کہ پاکستان مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بات نہ کرے مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ چار ماہ سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی کر رہا ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کے روز پارلیمنٹ ہاؤس میں پالیسی بیان دیتے ہوئے کیا مشیر خارجہ نے ایوان کو بتایا کہ اگر بھارت سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی کرے گا تو پاکستان بھی تیاری کرکے بیٹھا ہے اور پاکستان اپنے ھْوق کی جنگ لڑنا اثھی طرح جانتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ سندھ طاس معاہدے کی شک 12کے تحت بھارت پاکستان کا پانی کسی صورت پانی نہیں روک سکتا یہ ایک جامع معاہدہ ہے جو دو ملکوں کے درمیان ہوا تھا اگر بھارت پاکستان کا پانی روکے کا گا تو وہ سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی کریگا سندھ طاس معاہدہ بھارت کیساتھ دو جنگوں سیاہ چین اور کارگل جنگوں, میں بھی متاثر نہیں ہوا تو اب بھی نہیں ہوگا۔سندھ طاس, معاہدہ بین الاقوامی معاہدہ ہے ورلڈ بینک اس کا گارینٹر ہے اگر بھارت نے معاہدے کو ختم کرنے کی کوشش کی تو پوری عالمی برادری پاکستان کیساتھ کھڑی ہوگی سندھ طاس معاہدے کے تحت بھارت پانی کو روکے بغیر بجلی پیدا کر سکتا ہے اور ویسٹرن حصے پر بھارت نے 32 سے,زیادہ ڈیم بنا چکا ہے اگر معاہدہ توڑا گیا تو عالمی فورم سے رجوع کریں گے جس ممبر قومی اسمبلی شیریں مزاریں نے کہا کہ ورلڈبنک سہولت کار ہے گارینٹر نہیں ہے۔

اگر بھارت ایسی جارحیت کرتا ہے تو کیخلاف اب تک کیا پیش رفت کی گئی ہے اور سیکرٹری خارجہ سندھ طاس معاہدے میں ورلڈ بنک کے کردار اور ان کی پوزیشن کو واضح کریں جس پر سیکرٹری خارجہ نے کہا کہ ورلڈ بنک سہولت کار ہے لیکن اگر بھارت معاہدے کی خلاف ورزی کرتا ہے تو ورلڈ بنک بھارت پر دباؤ دے سکتا ہے ۔سیکرٹری خارجہ نے بھارتی جاسوس کی گرفتاری کے حوالے سے ایوان کو بتایا کہ دستاویزی ثبوت تیار کر رہے ہیں جلد دستاویزی ثبوت اقوام متحدہ میں پیش کریں گے اور دنیا کو بھارت کی پاکستان میں مداخلت بارے آگاہ کریں گے۔