بریکنگ نیوز
Home / انٹرنیشنل / افغان سیکورٹی فورسزکے انسداد دہشتگردی آپریشنز میں 86شدت پسند ہلاک 44زخمی

افغان سیکورٹی فورسزکے انسداد دہشتگردی آپریشنز میں 86شدت پسند ہلاک 44زخمی

کابل۔افغانستان میں سیکورٹی فورسزکے انسداد دہشتگردی آپریشن کے دوران 2طالبان کمانڈروں سمیت 86شدت پسند ہلاک اور 44زخمی ہوگئے جبکہ طالبان نے افغان نیشنل آرمی اور پولیس کے 2افسران کو اغواء کرلیا۔اتوارکو افغان میڈیا کے مطابق سیکورٹی فورسز کے مشترکہ آپریشن میں 57شدت پسند ہلاک اور 44زخمی ہوگئے ۔وزارت دفاع کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ سیکورٹی فورسز نے گیارہ صوبوں میں مشترکہ انسداد دہشتگردی آپریشن کیے جس میں ائیرفورس اور آرٹلری کی مدد بھی حاصل تھی ۔آپریشن صوبہ ننگرہار،لغمان ،لوگر،پکتیکا،غزنی،قندھار،ارزگان،ہرات ،فریاب،قندوز اور ہلمند میں کیے گئے ۔ہلاک شدت پسندوں میں داعش کے 4جنگجو بھی شامل ہیں۔مشرقی صوبہ ننگرہار میں سیکورٹی فورسز کے آپریشن میں طالبان لیڈر سمیت 4جنگجو ہلاک ہوگئے ۔مقامی سیکورٹی حکام کاکہنا ہے کہ آپریشن داعش کے مضبوط گڑھ ضلع آچن میں کیاگیا جس میں طالبان رہنما تین ساتھیوں کے ہمراہ مارا گیا۔آپریشن سپیشل فورسز نے کیا اس دوران مختلف ہتھیار اور دھماکہ خیز مواد بھی برآمد کرلیا گیا۔

ادھر جنوبی صوبہ ارزگان میں افغان فضائیہ کی کاروائی میں طالبان کو بھاری جانی نقصان اٹھا نا پڑا ہے ۔مقامی سیکورٹی حکام کا کہنا ہے کہ گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران ضلع ترین کوٹ میں جنگجوؤں کوبھاری جانی نقصان کا سامنا کرنا پڑا ہے ۔فضائی کاروائی میں 24شدت پسند مارے گئے ۔مغربی صوبہ ہرات میں طالبان عسکریت پسندوں نے افغان نیشنل آرمی اور پولیس کے 2افسران کو اغواء کرلیا۔

مقامی حکام کاکہنا ہے کہ دونوں افسران کو اس وقت اغواء کیا گیا جب وہ ضلع چشت میں ایک گاڑی کے ذریعے سفر کررہے تھے ۔صوبائی گورنر کے ترجمان جیلانی فرہاد نے تصدیق کی ہے کہ دونوں افسران ایک پرائیویٹ گاڑی میں سفرکررہے تھے جب طالبان نے ہرات شہر جاتے ہوئے انکی گاڑی کو روکا ۔شمال مشرقی صوبہ تخار میں بھتیجے کے ہاتھوں طالبان کا اہم کمانڈر مارا گیا۔مقامی حکام کاکہنا ہے کہ طالبان کمانڈر کی شناخت مجید کے نام سے ہوئی ہے جو ضلع ینگی قلعہ میں گروپ کی قیادت کررہا تھا۔