139

 خام مال کی درآمد کیلئے خودکار نظام متعارف کرانیکا فیصلہ 

اسلام آ باد۔ ایف بی آر نے صنعتی خام مال کی درآمد کے لئے خودکار نظام متعارف کرانے کا فیصلہ کر لیا،اگر متعلقہ کمشنر سات دن میں سر  ٹیفکیٹ کا فیصلہ نہیں کر پاتا تو پبلک لمیٹڈ کمپنی کو خود کار نظام یہ سرٹیفکیٹ جاری کر دے گا۔جمعرات کوفیڈرل بورڈ آف ریوینیو  کی جانب سے جاری کئے گئے  اعلامیہ کے مطابق ایف بی آر نے انکم ٹیکس آرڈینینس کے سیکشن 148 کے تحت ایگزیمشن سرٹیفیکیٹ جاری کرنے کا ایک موثر نظام مرتب کیا ہے۔

 خاص طور پر اس نظام کی افادیت صنعتوں میں استعمال ہونے والے خام مال کی درآمد میں کارگر ہو گی۔ یہ نظام ایک خودکار نظام پر مبنی ہے جس کی بدولت نہ صرف پراسیسنگ وقت میں کمی لائی جا سکے گی بلکہ ایگزیمشن سرٹیفیکیٹ کے اجراء میں بھی بہت کم وقت صرف ہو گا اور درآمدی خرچ میں کمی واقع ہو گی۔ اس خودکار نظام کے تحت پبلک اور پرائیویٹ کمپنیوں اور عام افراد کے لئے ایک خود کار طریقہ کار وضع کیا گیا ہے۔

 یہ خود کارنظام استعمال کنندہ سے آن لائن کچھ ضروری معلومات مہیا کرنے کو کہے گاجس کے بعد استعمال کنندہ اس نظام سے مستفید ہو سکتا ہے۔ ایف بی آر نے سیکشن 148کے تحت ایگزیمشن سرٹیفیکیٹ کا ایک نیا طریقہ کار وضع کیا ہے۔ اس نئے طریقہ کار کے تحت کمشنر کو پبلک کمپنی کو سات دن میں، پرائیویٹ کمپنی کو دس دن اور عام آدمی کو پندرہ دن میں ایگزیمشن سرٹیفیکیٹ جاری کرناہوگا۔

 اگر کمشنر درخواست پر مخصوص عرصہ تک عمل درآمد نہیں کرتا تو خودکارنظام ٹیکس گزار کو ایگزیمشن سرٹیفیکیٹ جاری کر دے گا۔ لیکن ماسوائے پبلک اور پرائیوٹ کمپنیز خود کار نظام کے تحت عام افراد کو جاری کردہ سرٹیفیکیٹ عارضی طور پر جاری کیا جائے گا۔

 خود کار نظام سرٹیفیکیٹ جاری نہیں کرے گا اگر کمشنر کی طرف سے درخواست دائر کرنے کے سات دن کے اندر کوئی اسائنمنٹ دی گئی ہویا پھر ٹیکس liabilityکی ادائیگی کا CPRاگر مہیا نہ کیا گیا ہو یا پھر ٹیکس گزار نے خام مال کے متبادل کی درآمد کے لئے درخواست دے رکھی ہو ایف بی آر اس خودکار نطام کو فافذ کرنے سے پہلے تمام سٹیک ہولڈرز اور جنرل پبلک سے اس سلسلے میں ان کی قیمتی آراء  لینا چاہتا ہے تاکہ نظام کو مذید بہتر بنایا جاسکے۔